وزارت اقتصادیات کا چین کے خطے ننگزیا کیساتھ معاشی تعاون پر تبادلہ خیال

وزارت اقتصادیات میں خارجہ تجارت کے امور کے انڈرسیکرٹری جمعہ محمد الكيت نے چین کے ننگزیا خطے کے ایک وفد سے ملاقات کی اور تجارتی اور اقتصادی تعاون کو فروغ دینے کے طریقوں پر تبادلہ خیال کیا.

چینی وفدکی قیادت ینچوآن کے میئر جیانگ چنگانگ کررہے تھے.

دبئی میں وزارت کے ہیڈکوارٹر میں ہونے والے اجلاس میں متحدہ عرب امارات اور چین کے درمیان اقتصادی اور تجارتی تعلقات کی اہمیت پر روشنی ڈالی گئی۔

اجلاس میں اس بات کا مشاہدہ کیا گیا کہ دونوں ملکوں کے اقتصادی تعلقات میں تسلسل کے ساتھ اضافہ ہوا ہے۔ دونوں ملک اس تعاون کو سٹریٹیجک تعاون میں بدلنے کے خواہاں ہیں.

فریقین نے ننگزیا خطے اور خاص طور پر اس کے دارالحکومت ینچوآن اور متحدہ عرب امارات کے درمیان پھولوں کی تجارت کے فروغ پر زور دیا.

الكيت نے کہا کہ ننگزیا بہت سے تاریخی اور ثقافتی تعلقات کے ذریعے عرب دنیا سے منسلک ہے، جو قدیم شاہراہ ریشم کی تاریخ ہے۔

انھوں نے کہا کہ ان تعلقات میں اضافہ ہوتا رہا ہے، یہاں تک کہ ننگزیا چین کا ایک اہم خطہ بن گیا اوراب یہ عرب منڈیوں کیلئے کھلاہے.

انہوں نے کہا کہ متحدہ عرب امارات نے "چین-عرب سٹیٹس ایکسپو” میں حصہ لیا جس کی میزبانی ننگزیا خطے نے کی ۔ یہ نمائش چین اورعرب دنیا کے درمیان تجارتی تعلقات کو مضبوط بنانے اور ترقی دینے سے متعلق چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کیلئے ایک اچھا پلیٹ فارم تھی.

چینی وفد کے سربراہ جیانگ چنگانگ نے دونوں ملکوں، خاص طور پر ینچوآن اورننگزیا خطے کے درمیان بہترین تعلقات پر روشنی ڈالی ۔

انھوں نےاقتصادی اورتجارتی تعاون کو مزید مضبوط بنانے کی خواہش کا اظہار کیا.

انہوں نے نشاندہی کی کہ ینچوآن چین میں ایک مشہور سیاحتی مقام ہے ۔ اس کی قدرتی خوبصورتی، شہر کے ارد گرد سبز علاقوں اور آب وہوا کے باعث اس علاقے کی سیاحت کے شعبے میں خاصی ترقی دیکھنے میں آئی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ان تمام مواقع کی موجودگی میں وہ شہر میں سیاحت کے شعبے کو مزید ترقی دینا چاہتے ہیں۔ انھوں نے دونوں اطراف کی کاروباری شخصیات کے درمیان تعلقات مضبوط کرنے کی اہمیت پر بھی زور دیا.

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.